Dil ke gulshan se mohabbat ke kanwal laya hon by munazza bukhari

Posted on

The exciting story of ‘Dil ke gulshan se mohabbat ke Kanwal laya hon by Munazza Bukhari takes you through a world filled with different feelings and experiences. It talks about how people interact in society, covering topics like age gaps in relationships, marrying cousins, love stories, and the complex ways families work together.

“ذیشانہ ہم لوگ کورٹ جارہے ہیں۔ ” وہ اس کی جانب متوجہ ہوا۔ “مگر کیوں ؟” ذیشانہ نے حیرانی سے علی کی طرف دیکھا۔ “کورٹ میرج کرنے ۔ ” اس نے اطمینان سے جواب دیا۔ علی کا جواب تھا یا کوئی آتش فشاں پھٹا تھا جس کی زد میں ذیشانہ حسن کا پورا وجود آ چکا تھا۔ “آپ ہوش میں تو ہیں ؟” غم و غصے کی شدت سے اس کی آواز پھٹ گئی۔ “زیادہ چلانے کی ضرورت نہیں تم اب اتنی بھی بچی نہیں ہو جو کورٹ میرج جیسے لفظ سے ناآشنا ہو اور مس حسن یہ تم اچھی طرح جان لو کہ میں اپنی بات کی وضاحت دوبارہ کسی کے سامنے پیش نہیں کرتا انڈراسٹینڈ ” برفیلا لہجہ سلگتا انداز اس کے اندر تک سنانے بکھیرتا چلا گیا۔ “پلیز ایسا مت کریں نہ تو آپ میرے بارے میں جانتے ہیں اور نہ میں ۔ کیا دو اجنبی لوگوں کا ملاپ ہو سکتا ہے۔” ذیشانہ منت پر اتر آئی۔ “تم میرے لیے اجنبی نہیں ہو تم کون ہو کیا ہو سب معلوم ہے مجھے۔ باقی رہا تمہارے جاننے کا سوال تو تمہارے لیے یہ ہی بہت ہے کہ شاہ زرعلی خان تمہیں اپنا نام دے رہا۔” مگر یوں لگ رہا تھا جیسے اس نے کچھ سنا ہی نہ ہو۔ “آخر میں نے یا میرے گھر والوں نے آپ کا کیا بگاڑا ہے؟” وہ ہوش میں نہیں لگ رہی تھی۔ “اگر تم نے ایک لفظ بھی منہ سے نکالا تو لحاظ بالکل نہیں کروں گا ۔ اپنے یہ مگرمچھ کے آنسو صاف کر لو۔ اس وقت نہ خود تماشا بنواور نہ مجھے کچھ کرنے پر مجبور کرو۔ نکاح تو ہر حالت میں ابھی اسی وقت اور کورٹ میں ہوگا ۔” وہ گاڑی روک کر نیچے اتر گیا۔ ذیشانہ نے آس پاس دیکھا کافی لوگ کورٹ کے باہر جمع تھے۔ اس نے ایک بے بس نظر اس کٹھور انسان پر ڈالی اور آنسو ضبط کرتی اس کے ساتھ چل پڑی۔ میرج پیر پر سائن کرتے ہوئے ایک بار پھر اس کا ضبط جواب دے گیا اور وہ پوری شدت سے رودی۔ جج نے بڑی ترحم آمیز نظروں سے ذیشانہ کی طرف دیکھا۔ “کیا بچی کی رضا شامل نہیں ہے صاحبزادے؟” حج کے سوال پر ایک لمحے کے لیے تو وہ گھبرا گیا۔ لیکن جلد ہی بات بنانے میں کامیاب ہو گیا ۔ “وہ سرا اگر ایسے موقعوں پر ماں باپ نہ ہوں تو ہر لڑکی جذباتی ہو جاتی۔” جج نے افسوس کیا۔ ذیشانہ نے ایک لمحے کے لیے اس کٹھور شخص کو دیکھا جو بات بن جانے پر خوش لگ رہا تھا۔ کورٹ سے باہر آتے ہی ذیشانہ کو یوں محسوس ہورہا تھا جیسے وہ رسوائی اور بدنامی کے پاتال میں دھنستی جارہی ہو

Munazza Bukhari’s storytelling artfully addresses topics like age disparities, cousin marriages, and contract and forced marriages, alongside gripping narratives of abduction and military life, all woven into a rich tapestry of cultural and personal exploration.

Dil ke gulshan se mohabbat ke Kanwal laya hon by Munazza Bukhari

Dil ke gulshan se mohabbat ke Kanwal laya hon by Munazza Bukhari

For a better reading experience, click the download button to obtain the PDF version of ‘Dil ke gulshan se mohabbat ke Kanwal laya hon by Munazza Bukhari

ناول کا پی ڈی ایف ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے ڈاؤن لوڈ کے بٹن پر کلک کریں

or

Choose the online reading option for immediate access to ‘Dil ke gulshan se mohabbat ke Kanwal laya hon by Munazza Bukhari .

ناول کو پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

Welcome to Novel Galaxy

At Novel Galaxy, we pride ourselves on curating a diverse array of Urdu novels, encompassing various genres and themes. Our collection features novels focused on social issues, tales of stoic heroes, revenge-driven plots, and much more. We offer an extensive range of Urdu e-books, digests, and spine-tingling horror and thriller stories. All novels are available for online reading and in downloadable PDF formats.

Discover the Richness of Urdu Novels

Dive into our comprehensive selection of Urdu novels, categorized for your convenience. Whether you’re seeking a heartwarming romance, a suspenseful thriller, or a reflective social commentary, our library has it all.

You might also like these NOVELS

Leave a Comment