Ek Asman Par Hum Do Chand Adhy Hein By J.Nikhat

Posted on

Ek Asman Par Hum Do Chand Adhy Hein By J.Nikhat complete Urdu novel based on social issues, age differences, cousin marriage, romantic, family system-based, kidnapping-based, funny, contract marriage, forced marriage, army-based books, etc.

بابافرنیچرلینےکی یا روم سیٹ کرنےکی کیاضرورت ہے آپ چارپانچ امرودکےاور دو تین آم کےپیرگارڈن میں لگوالیں۔اور ساتھ ایک چار پائی خریدلیں کافی ہے۔آپ کی لاڈلی آنےوالی بہو کےلیۓ۔راحیل تحمل سےایسےبولاجیسےوہ واقعی ایساکرواناچاہتاہو۔ لیکن بیٹااس سےکیاہوگا؟تنویرصاھب نےبھی اسکی حالت کامزہ لیناچاہا۔

ہوناکیاہےبابامحترمہ بندروں کی طرح پیرپر سے آم امرود توڑکرکھائیں گی اینڈچارپائی پربیٹھ کراپنی پڑھائی کرینگی بات ختم اب چلوں مجھےفریش بھی ہونا۔راحیل اپنابیاگ اٹھاتاہوادونوں کو گھورکرپوچھا۔ ارے!بھائی دودن میں آپ کی شادی ہونےوالی ہے۔اور آپ ہیں کی اپناموڈخراب کئےگھوم رہےہیں۔بیٹھیں یہاں ٹھنڈا وغیرہ لیں اوراگرملاقات کاکوئی چکرہےتو آپ کابھائی ہے نامیں علی بھائی سےبات کرتاہوں۔

احسن اسےصوفے بیٹھاتااپنےخدمات پیش کئےجو راحیل کو کچھ اورتپاگئے تھے۔ احسن کیاگھرکےباقی لوگ کم ہیں میرادماغ گھمانےکے لیۓ جو تم بھی آگئےہو۔راحیل ذچ ہوا۔کوئی اسکی پروبلم ہی نہیں سمجھ رہاتھا۔ اچھا۔۔اچھا۔۔۔۔بتائیں پھردولہےراجا کےکیامسائل ہیں۔احسن تھوراسنجیدہ ہوا۔تنویرصاھب بھی آکرخاموشی اسکےساتھ بیٹھ گئے۔

پروبلم کچھ نہیں ہےسب کلئیرہےلیکن آپ سب مل کر زبر دستی پروبلم کریئٹ کررہےہیں۔جب آپ لوگ جانتے ہیں کی یہ شادی ویسی نہیں ہے جیسی نظرآرہی ہےتو پھر یہ رسم رواج ہنسی مذاق کاکیاتک بنتاہے۔ کیامطلب ہےتمہارا؟تنویرصاھب سنجیدہ ہوئے۔ مطلب صاف ہےپاپااس شادی کےپیچھےتین اہم کردار ہیں۔میں علی اوراجالا۔

میں یہ شادی علی اپنےدوست کی مشکل آسان کرنے کے لیۓ کررہاہوں۔ علی یہ شادی اپنی بیٹی جیسی کزن کو لوگوں کی گندی ذہنیت اورالزامات سےبچانےکےلیۓکررہاہے۔اور اجالا۔اجالا کےنام پرراحیل کابےساختہ ہاتھ اپنی ناک پر گیاتھا۔ اسےتو علی نےمنایاہی اس شرط پرہے کی اگروہ یہ شادی کر لےگی تو وہ اسےچھوڑ کردبئی نہیں جائےگا۔

اور ان محترمہ کےلیۓنکاح نامےپر سائن کرنےکا مطلب ہی یہی ہے کی انہیں اپنابھائی اپنےسےدورنہیں کرناہے۔ وجہ جو بھی شادی کےحالات جو بھی ہوں لیکن تمہاری شادی کولیکرخاندان والوں کےتمہاری ماں بہن کے بہت سے ارمان ہیں جو وہ نکال رہیں اورپھراس بچی کےبھی تو ہزاروں ارمان ہونگےآخروہ اتنی چھوٹی تو نہیں ماشاءالله سےسترہ سال کی ہیں

۔تنویر صاھب نےاسے سمجھاناچاہا۔ باباوہ دنیاں کی نظرمیں سترہ سال کی ہے۔لیکن علی کی نظروں وہ سات سال کی بچی ہی ہے۔صبح جس کی پونی تک وہ خودبناکرآتاہے۔ صبح اسےکالج چھوڑناشام میں واپس لانااسکےساتھ ویڈیو گیم کھیلناکارٹون دیکھنااسکےبال بنانا۔یہاں تک رات میں جب وہ سوجاتی ہیں ناتین باروہ اسکےکمرے کا لوک چیک کرنےجاتاہے۔

مجھےتو لگتاہےکوئی سات سال کی بچی تک کو ایساٹریٹ نہیں کرتاہوگاجیساوہ کرتاہے۔ اور رہی بات محترمہ اجالاصاھبہ کےارمانوں کی توہزاروں کاتو پتانہیں کچھ ارمان کی لسٹ یوں ہےکی۔انہیں ویڈیو گیم جیسافضول گیم کھیلنےکےارمان ہیں بے تکےکارٹون موویز دیکھنےکاشوق ہےکرکٹ کھیل کرلوگوں کےناک توڑنےکاتو خیرسےایکسپیرنس ہے۔راحیل نےاپنےناک کو چھوا۔ پیروں پراچھل کودکرنی ہے۔ہاں ایک ڈھنگ کاارمان یہ ہے کی انہیں ڈاکٹربنناہیں

۔زہین خیرسےکافی ہیں بس تھوری سی عقل آجائےتوڈاکٹربننےکےپورےچانسیس ہیں۔ واہ!۔۔۔واہ!۔۔۔۔کافی معلومات جمع کررکھی ہے بھائی نوٹ بیئڈ۔ احسن نےاسکی پیٹھ تھپتھپاکرشاباشی دی۔جس راحیل نےاسےایک سخت گھوری سےنوازہ تھاوہ یہاں سیریس بات کرہاتھااورسب کو مذاق کی پڑی تھی۔ خیریہ کوئی برا یا بڑا مسئلہ نہیں ہےپونی تمہاری مامابنا دینگی۔ویڈیو گیم مہرکےساتھ کھیل لیاکرےگی کرکٹ کاتو خیرسےمجھےبھی بڑاشوق ہے۔

ہاں کارٹون تم دیکھ لینابچی کےساتھ آخرتمہارابھی کوئی فرض ہے۔ بابا!!!!!!!!!!!!!راحیل نےاحتجاج کیا۔ بابابی سیریس پلززز۔راحیل انکے غیرسنجیدہ انداز پرخود سنجیدہ ہوا۔ بابا!اجالا دنیاں کےلیۓاسکی کزن ہےلیکن علی کےلیۓ وہ اسکی بیٹی جیسی ہے۔پتاہےہمارےمیٹرک کےامتحان کا ایک پرچہ علی نےصرف اجالاکو سکول میں چوٹ لگنے کی خبرسن کرچھوڑگیاتھا۔

اتناپیارکرتاہےوہ اپنی بہن سے۔لیکن یہ سماج کےذہنی مریض لوگ نہیں سمجھتے۔ اورانہیں کی گندی ذہنیت کی وجہ سےاسےاجالا کی شادی مجھ سےکروانی پررہی ہے۔ورنہ وہ ایساکبھی ناکرتا۔کاش آنٹی کاانتقال ناہواہوتاتو یہ نوبت ہی نہیں آتی ہماری زندگی میں۔راحیل افسوس سےبولا۔

اس لیۓپلز آپ لوگ اجالاسےیااس رشتہ سے کوئی امید نارکھیں کیونکہ میں اوراجالاایک آسماں کےدو چاند کی طرح ہیں وہ بھی آدھےآدھے۔جو شائد ہی مل سکے۔راحیل اپنی بات کہتاوہاں سےچلاگیاتھا۔اور تنویر صاھب اسکی پشت کودیکھتےرہ گئے۔ ڈونٹ وری چاچو۔یہ ابھی قسمت کےکھیل نہیں جانتے اس لیۓایسابول گئے۔احسن نےان کےکاندھےپر ہاتھ رکھا۔

Dive into the Depths of Emotion and Discovery with ‘Ek Asman Par Hum Do Chand Adhy Hein’ By J.Nikhat: A Tale of Love, Identity, and the Life Journey Within.

Ek Asman Par Hum Do Chand Adhy Hein By J.Nikhat in Pdf

Ek Asman Par Hum Do Chand Adhy Hein By J.Nikhat

Ek Asman Par Hum Do Chand Adhy Hein By J.Nikhat In Pdf Form

ناول کا پی ڈی ایف ڈاؤن لوڈکرنے کے لیے ڈاؤن لوڈ کے بٹن پرکلک کریں

👇

or

ناول کوپڑھنے کے لیےیہا ں کلک کریں

👇

Novel Galaxy is a world of Urdu novels based on social issues, rude heroes novels, Urdu revenge base novels, Urdu E-book, Urdu digest, Urdu horror and thriller novels, etc. All novels are also available online and in PDF form.

Top Categories of Urdu Novels 

 Here, you will find a list of Urdu novels from all categories that can easily be downloaded in PDF format and saved into your devices/mobile with just one click.

There’s no content to show here yet.

You might also like these NOVELS

Leave a Comment