Hum Tum by Bushra Sheikh

Posted on

Hum Tum by Bushra Sheikh complete Urdu novel based on social issues, age differences, cousin marriage, romantic, family system-based, kidnapping-based, funny, contract marriage, forced marriage, army-based novels, etc.

تم یہاں کیا کررہی ہوں؟؟ وہ پورا روم دیکھ لیا تھا تو پھر یہ جگہ دیکھنے آ گئی تھی ایڈیٹ میرا مطلب ہے میرے روم میں کیوں آئی ہو؟؟ وہ پھر سے اس کے قریب آکے چیخا وہ خالہ —- آآآپ دو دور رہ کے بات نہیں کر سکتے ؟؟ اس نے دو قدم پیچھے ہوتے ہوئیے کہا نہیں میں ایسے ہی بات کروں گا وہ پھر سے آگے ہوا۔۔۔۔ اب بولوں میرے روم میں کیوں آئی ہوں؟؟

ایے ایک تو آپ کے کپ کپڑے نہیں پہنے اووپر سے ات اتنا پپ پاس مم مطلب در دور رہیں وہ اسے تھوڑا دور کرتی وارڈ روب سی باہر نکل کے کمرے میں آئی آدم بھی اس کے پیچھے آیا اور جھٹکے سے اس کا ہاتھ پکڑ اسے اپنی طرف کیا یہ میرا روم ہے میری مرضی جیسے مرضی گھوموں پھیروں ۔۔۔ تمہیں مطلب نہیں ہونا چاہیے میرا سوال اب بھی وہی ہے کہ میرے روم میں کیوں آئی ہی ہوں؟؟ خالہ جانی نے کہا تھا یہاں آنے تک کے لیے اس نے نیچے دیکھ کے کہا او کے ان سے تو میں صبح بات کروں گا

آدم نے اس کو چھوڑا اور وارڈ روب واپس چلا گیا اووو ہیلو یہ کیا کر رہی ہو میرے بیڈ پہ ؟؟؟ وہ اب ٹائیٹ سوٹ پہن چکا تھا اٹھو یہاں سے یہاں پہ میں نے سونا ہے آدم نے اس کو بازو سے پکڑ کے اٹھایا یہاں ہم سو جاتے ہیں نا پلیز۔۔۔ حوا نے کہا هم ؟؟؟ وٹ ڈو یو مین ؟؟؟ آدم کو تو سن کے جھٹکا لگا اس کو اندازہ نہیں تھا کہ وہ اتنی بولڈ ہو سکتی ہے جی ہم یہاں سوئیے گے آپ کو کوئی ی اعتراض تو نہیں؟؟

حوا نے پھر کہا اس کو تو اندازہ بھی نہیں تھا کہ اس کے اس “ہم ” بولنے کا سامنے والا کیا مطلب لے رہا ہے؟؟ ارے یار تم تو بڑی بے شرم لڑکی ہو ۔۔۔ بار بار ایک ہی بات بول رہی ہو ہم یہاں سوئی گے ہم یہاں سوئی گے نہیں نہیں آپ غلط سمجھ رہے ہیں اب اسکی بات سمجھ لگی ہم تو ہماری بات کررہے ہیں ہم مطلب بس ہم ۔۔۔ شاید وہ اپنی بات اسے سمجھا نہیں پارہی تھی. او ہیلو مجبوری میں تم سے شادی کیا کرلی تم کیا سمجھ رہی ہو کہ اس کمرے میں دلہن کے روپ میں دیکھ کے ہمارا رشتہ ایک ہیپی کپل والا بن جائیے گا ؟

ہم نے ایسا کب کہا آپ سے ؟؟ ہم تو بس یہ کہہ رہے ہیں کہ ہم یہاں سو جاتے ہیں اور آپ وہاں صوفے پہ سو جائی کل ہم خود ہی خالہ جانی سے کہہ کے اپنا دوسرا کمرہ کروا لیں گے آدم نے حوا کی پوری بات غور سے تو نہیں سنی بس اس بات پہ غور کیا کہ وہ اپنے آپ کو ہم کہہ رہی ہے ٹھیک ہے تم یہاں سو جاؤ صوفے سے سارے کشن اٹھا کہ وہ بیڈ کی دوسری سائیڈ یہ گیا

درمیان میں ایک آڑ بنائی اور لیٹ گیا آپ یہاں کیوں لیے ہیں؟؟ مس مصیبت یہ کمرہ میرا ہے تو بیڈ بھی میرا ہی ہوا نا؟؟ تواپنے آدھے بیڈ پہ میں اتنا تو حق رکھ ہی سکتا ہوں ناکہ سکون سے سو سکوں؟؟ اس نے آنکھوں پر سے ہاتھ ہٹا کے غصے میں کہا الله لیکن لیکن کیا ؟؟ ہاں بتاؤ زرا وہ اب اٹھ کے ہی بیٹھ گیا تمہیں یہ لگ رہا ہے

کہ میں تمہارے قریب آنے کے لیے مرا جا رہا ہوں؟؟ جو رات کو تمہارے سونے کے بعد میں تمہارے قریب نا آ جاؤ ؟؟ تو میری بات غور سے سنو مس مصیبت اگر میں نے ایسا کرنا ہی ہے تو مجھے رات کے اندھیرے کی ضرورت نہیں اگر میں خود ایسا چاہو تو کوئی کی طاقت ایسا کرنے سے روک نہیں سکتی کیونکہ تم میری قانونی اور شرعی بیوی ہو اب کوئی مسئلہ نا ہو تو سکون سے سو سکتا ہوں ؟؟ اس نے لیٹتے ہوئے کہا .

Dive into the Depths of Emotion and Discovery with ‘Hum Tum’ by Bushra Sheikh: A Tale of Love, Identity, and the Life Journey Within.

Hum Tum by Bushra Sheikh in Pdf

Hum Tum by Bushra Sheikh

ناول کا پی ڈی ایف ڈاؤن لوڈکرنے کے لیے ڈاؤن لوڈ کے بٹن پرکلک کریں

👇

or

ناول کوپڑھنے کے لیےیہا ں کلک کریں

👇

Novel Galaxy is a world of Urdu novels based on social issues, rude heroes novels, Urdu revenge base novels, Urdu E-book, Urdu digest, Urdu horror and thriller novels, etc. All novels are also available online and in PDF form.

Top Categories of Urdu Novels 

 Here, you will find a list of Urdu novels from all categories that can easily be downloaded in PDF format and saved into your devices/mobile with just one click.

There’s no content to show here yet.

You might also like these NOVELS

Leave a Comment