Man o Salwa by Umera Ahmed

Posted on

Man o Salwa by Umera Ahmed complete Urdu novel based on social issues, age differences, cousin marriage, romantic, family system-based, kidnapping-based, funny, contract marriage, forced marriage, army-based books, etc.

گاڑی گیٹ سے باہر نکلتے ہی… اشتیاق رندھاوا نے گردن مو ڑ کو زینی سے کہا۔ ”تم جانتی ہو اسے؟” چند لمحوں کے لیے زینی کھڑکی سے باہر دیکھتے ہوئے ساکت رہ گئی۔ اسے اشتیاق رندھاوا سے اس سوال کی توقع نہیں تھی۔

”کسے…؟” اپنے حواس پر قابو پاتے ہوئے اس نے گردن موڑ کر اشتیاق کو دیکھا جو یک دم بے حد سنجیدہ نظر آرہا تھا۔ ”سعید نواز کے داماد کو؟” ”نہیں۔” زینی نے اس کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر کہا۔ ”میں نہیں مانتا۔ اتنی تذلیل تم کسی انجان آدمی کی نہیں کر سکتیں

۔” اشتیاق نے اسے کچھ اور چونکا دیا۔ ”تذلیل۔۔۔۔” زینی نے بے ساختہ کہا۔ وہ اور کچھ دیر آنکھوں میں آنکھیں ڈالے ایک دوسرے کو دیکھتے رہے پھر بے اختیار کھلکھلا کر ہنس پڑے۔ ”آپ کو پتہ تھا کہ اس کی تذلیل کر رہی ہوں تو میرا ساتھ کیوں دے رہے تھے؟” زینی نے ہنستے ہوئے کہا۔ ”وہ ”شناسا” تھا تم محبوبہ ہو ”مجنوں” کیا کرتا…

لیکن کچھ دیر کے لیے تو میں بھی حواس باختہ ہو گیا تھا۔ تم نے پہلے کبھی ایسا نہیں کیا۔ حیران تھا، آج کیا ہو گیا ہے۔ تم تو کسی اجنبی کو گھاس تک نہیں ڈالتیں۔ کہاں یہ کہ شیراز سے اس کے خاندان کے بارے میں پوچھنے بیٹھ گئیں۔” وہ اشتیاق کی بات سنتی رہی۔ ”سعید نواز چاہتا کیا ہے آپ سے؟” زینی نے بات بدلی۔ ”بہت کچھ… اپنے داماد کی کراچی میں ایک کھانے پینے والی جگہ پوسٹنگ… جاب میں ایکسٹینشن اور ایک پرمٹ۔”

”اور آپ کیا دیں گے اسے؟” ”یہ تو پری زاد طے کرے گی۔” زینی چند لمحے اسے دیکھتی رہی پھر اس نے کہا۔ ”دے دیں اسے جو چاہتا ہے۔” ”واقعی؟” اشتیاق نے دلچسپی سے کہا۔ ”ہاں… جوتے اٹھانے کے بعد کچھ تو ملناچاہیے اسے۔” اس نے تنفر سے کہا۔ اشتیاق ہنس پڑا۔ ”تم نے بتایا نہیں کہ شیراز سے کیا تعلق ہے تمہارا؟” زینی نے ایک گہرا سانس لیا۔ ”آپ جان کر کیا کریں گے؟” ”تم سے ہمدردی بہرحال نہیں کروں گا۔”

”پھر تو رہنے ہی دیں۔” ”تم اس کی وہ منگیتر ہو، جسے اس نے سی ایس ایس کے بعد چھوڑ دیا؟” زینی کو دھچکا لگا۔ اشتیاق مسکرا رہا تھا۔ ”مجھے تو اب آپ سے ڈر لگنے لگا ہے۔” ”معشوق کو کبھی عاشق سے ڈر لگتا ہے؟” زینی خاموش رہی۔ وہ شیراز کے بارے میں سوچ رہی تھی۔ ”مجھ سے شادی کرو گی پری زاد؟”

وہ ایک بار پھر چونکی۔ اشتیاق ہفتہ میں ایک بار اسے پرپوز ضرور کرتا تھا۔ کبھی فون پر، کبھی بالمشافہ ملاقات پر لیکن سڑک پر آج وہ پہلی بار یہ بات کر رہا تھا۔ ”نہیں۔” اس نے بڑی محبت کے ساتھ اشتیاق کے کندھے پر ہاتھ رکھ کر کہا۔ ”کتنے سال انکار کر و گی پری زاد؟” ”جتنے سال زندگی ہے میری۔” وہ ہنسی۔ وہ جیسے کراہا۔ ”اس کا مطلب ہے، انتظار بہت طویل ہو گا۔” ”یہ بھی ممکن ہے بہت مختصر ہو۔”

”آج ”عروج” ہے تمہارا اس لیے شادی نہیں کرنا چاہتی۔ میں تمہارے ”زوال” کا انتظار کر رہا ہوں۔” وہ سنجیدہ ہو گیا۔ ”زوال میں آپ کے پاس ”پری زاد” نہیں، کوئی دوسری پری ہو گی۔” زینی پھر ہنسی۔ ”طنز کر رہی ہو؟” ”نہیں، آپ سمجھیں، مشورہ دے رہی ہوں۔” اس نے لاپروائی سے کہا۔ اشتیاق کچھ دیر خاموش رہا پھر اس نے کہا۔

”سلمان کے پیپرز بنوا دیے ہیں میں نے، ایک دو دن تک بھجوا دوں گا تمہیں۔ وہاں اس کی جاب کا بھی انتظام کر دیا ہے میں نے۔ شروع میں اپنے دوست کے گھر پر ہی رہائش کا انتظام کروایا ہے پھر ایک بار وہ جاب کرنا شروع کر دے تو دیکھوں گا کیا ہوتا ہے۔”

زینی نے بے حد احسان مند نظروں سے اسے دیکھا ۔ ”میں۔۔۔۔” اشتیاق نے بے نیازی سے اس کی بات کاٹی۔ ”آگے کچھ مت کہنا، تمہاری زبان میں عاجزی آئے گی تو مجھے بُری لگنے لگو گی تم۔ تمہاری زبان کی کڑواہٹ اچھی لگتی ہے مجھے۔” زینی واقعی بول نہیں سکی

Dive into the Depths of Emotion and Discovery with ‘Man o Salwa’ by Umera Ahmed: A Tale of Love, Identity, and the Life Journey Within.

Man o Salwa by Umera Ahmed in Pdf

Man o Salwa by Umera Ahmed

ناول کا پی ڈی ایف ڈاؤن لوڈکرنے کے لیے ڈاؤن لوڈ کے بٹن پرکلک کریں

👇

or

ناول کوپڑھنے کے لیےیہا ں کلک کریں

👇

Novel Galaxy is a world of Urdu novels based on social issues, rude heroes novels, Urdu revenge base novels, Urdu E-book, Urdu digest, Urdu horror and thriller novels, etc. All novels are also available online and in PDF form.

Top Categories of Urdu Novels 

 Here, you will find a list of Urdu novels from all categories that can easily be downloaded in PDF format and saved into your devices/mobile with just one click.

You might also like these NOVELS

Leave a Comment