Zeest ka Hamrahi Novel by Huma Waqas

Posted on

Zeest ka Hamrahi Novel by Huma Waqas pdf is available here. Huma Waqas is a social media writer. Her writing style is so mesmerizing that one can dive into their words. She writes Urdu novels based on social issues, age differences, cousin marriage, romantic novels, family system-based novels, kidnapping-based novels, funny, contract marriage, forced marriage, army-based novels, etc.

The platform of the Novel Galaxy brought a golden opportunity for all writers who want to get recognition worldwide by their writers. So if you’re going to get your work published contact us.

Zeest ka Hamrahi Novel by Huma Waqas presents our society’s issues. you can download this novel pdf easily with just one click.

Novel name: Zeest ka Hamrahi Novel by Huma Waqas

Writer name: Huma Waqas

Category: Romantic novel

Novel status: complete

وہ بابا کی اس جاننے والی عورت کو دیکھنے کے لیے آیا تھا ۔۔۔ اوپریٹ کامیاب رہا تھا۔۔۔ اب ساجدہ کو ہوش آیا تھا۔۔۔۔ وہ پاس کھڑا۔۔۔ اس کا ڈسکرپشن دیکھ رہاتھا کہ اچانک احان کی نظر اس پر پڑی تو اس نے دونوں ہاتھ معافی کی شکل میں جوڑے ہوۓ تھے۔۔۔۔۔ یہ۔۔۔یہ۔۔۔ کیا کر رہی آپ۔ ۔۔ احان نے پریشانی اور حیرانی کے ملے جلے تاثر سے۔۔۔ ساجدہ کی طرف دیکھا۔۔۔ اور پھر پیچھے بیٹھی تمنا کی طرف۔۔۔۔ ہانیہ کو بلا دو۔۔۔ اسے کہو ۔۔۔ مجھے معاف کر دے۔۔۔۔ ساجدہ سے بولنا مشکل ہو رہا تھا۔۔۔ ہانیہ۔۔۔ آپ ۔۔۔آپ ۔۔۔کیسے جانتی اسے اور کیا معافی۔۔۔۔۔ ساجدہ بولتی جا رہی تھی۔۔۔ اور وہ۔۔۔ ہونق بنا سب سن رہا تھا۔۔۔۔ پھر تمنا بولنا شروع ہوٸی کہہ کیسے اس نے ہانیہ کو گھرسے باہر بھگایا تھا۔۔۔ اس پر پہاڑ ٹوٹ رہے تھے حقیقت کے۔۔۔۔ سب کچھ اس کی ہر مجبوری آشکار ہو رہی تھی۔۔۔۔ وہ سکتے کے عالم کھڑا ساجدہ ہی کی زبانی اس کے ظلم سن رہا تھا جو وہ ہانیہ پر کرتی رہی تھی۔۔۔۔ ۔ اور پھر حیدرکا ان کے گھر آنا۔۔۔ نزیر کا پکڑے جانا۔۔۔۔۔ تمنا رو رہی تھی۔۔۔ اور ہانیہ کی ہر ایک بات بتا رہی تھی۔۔۔۔ خدا کا واسطہ بیٹا۔۔۔۔ ہانیہ کو کہو۔۔۔ مجھے معاف کر دٕے۔۔۔ بس ایک دفعہ ۔۔۔۔ وہ خاموشی سے باہر نکلتا چلا گیا۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ گھر پہنچا تو مکمل خا موشی تھٕی۔۔۔۔ وہ چپ چاپ اپنے کمرے میں آیا۔۔۔۔ دل عجیب سا ہو رہا تھا۔۔۔۔ وہ بیڈ کی ساٸیڈ ٹیبل میں سے۔۔۔ ہانیہ کا وہ خط نکال رہا تھا جو اس دن اس نے غصے میں پھینک دیا تھا۔۔۔۔ کیا کیا نہیں تھا ہانیہ کے دل میں وہ پڑھتا جا رہا تھا۔۔ اور آنسو۔۔۔ اس کے گلے میں اٹکتے جا رہے تھے۔ کوٸی ایسا پل نہیں تھا ۔۔۔ جس میں اس نے احان سے محبت نا کی ہو۔۔۔ اوہ ۔۔۔ یہ میں کیا کر بیٹھا۔۔۔۔۔ اسے سمجھ نہیں آ رہی تھی۔۔۔۔۔ وہ خود کو کیا سزا دے۔۔۔۔ جس طرح محبت کے سمندر کے چاروں اور ایک دم سے دیوار بنی تھی۔۔۔ اسی طرح ڈھیتی جا رہی تھی۔۔۔۔ اب تو دل میں شرمندگی کے ساتھ ۔۔ محبت کا سمندر ٹھاٹھیں مار رہا تھا۔۔۔۔ کاغز کو اسی طرح فولڈ کر کے اس نے۔۔ دراز میں رکھ دیا تھا۔۔۔۔ پھر آہستہ سے بوجھل قدم اٹھاتا اسکے کمرے کے بلکل سامنے آیا تھا۔۔ ہانیہ۔۔۔ ہانیہ۔۔۔۔ اس نے آواز لگاٸی تھی۔۔۔ آج نا تو آواز میں سختی تھی اور نا ہی وہ نفرت۔۔۔۔

Zeest ka Hamrahi Novel by Huma Waqas pdf is here

Zeest ka Hamrahi Novel by Huma Waqas

Or

Other novels by this writer are

تمام سوشل میڈیا رائیٹرز کو ” ناول گلیکسی” کی ٹیم خوش آمدید کہتی ہے  ۔

ہماری ٹیم کا حصہ بننے کے لیئے اپنا مواد اس ای میل پر بھیجیں۔

Novelgalaxy27@gmail.com

You might also like these NOVELS

Leave a Comment